Kal school khul rahe haiN

Malik Omaid

school

Kal school khul rahe haiN
Ghareb aaram se soyeN ge
Kyun keh in ke paas
Taleem jesi mehengi khushyaaN dene ke liye
Sarmayay ki kami hai
Aur restoranon gerajon aur fektriyon ko
Hanooz dehshat gardi ka samna nahiN
Woh aram se soyeN ge
——
Kal school Khul rahe haiN
Sarmayah jin ke ghroN ki bandi hai
Khafeef andeshoN aur wehmoN ke sath
Woh bhi aram se soyen ge
Phone achuke haiN
Yaqeen dihani ke
DewareN qad adam aur baRen lag chuki haiN
Hifazati amlah bhi baRha diya gya hai
‘Janab hum poori tarah tayar haiN’
Woh aram se soyeN ge
—–
Kuch log magar chain nahiN payeN ge
In ke bachoN aur dehshat gardoN ke darmiyaN
Mehez aik darwazay ki ‘kundi’ hail hai

 

کل اسکول کھل رہے ہیں
غریب آرام سے سوئیں گے
کیوں کہ ان کے پاس
تعلیم جیسی مہنگی خوشیاں دینے کے لیے
سرمایے کی کمی ہے
اور ریستورانوں، گیراجوں،فیکٹریوں کو
ہنوز دہشت گردی کا سامنا نہیں ہے
وہ آرام سے سوئیں گے
——-
کل اسکول کھل رہے ہیں
سرمایہ جن کے گھروں کی باندی ہے
خفیف اندیشوں اور وہموں کے ساتھ
وہ بھی آرام سے سوئیں گے
فون آچکے ہیں
یقین دہانی کے
دیواریں قد آدم اور باڑیں لگ چکی ہیں
حفاظتی عملہ بھی بڑھا دیا گیا ہے
‘جناب ہم پوری طرح تیار ہیں’
وہ آرام سے سوئیں گے
——

کچھ لوگ مگر چین نہیں پائیں گے
ان کے بچوں اور دہشت گردوں کے درمیاں
محض ایک دروازہ کی ‘کنڈی’ حائل ہے