یہ کیسی دیوار گریہ ہے؟ (The Wailing Wall)

تحریر: علی ارقم

Sabeen2

یہ کیسی دیوارِ گریہ ہے
ہماری آہ و زاری!
جس کے کانوں پر
مدّتوں سے پڑ رہی ہے
مگر اس میں کوئی لرزش نہیں ہوتی
اوراس کی دراڑوں میں
ہمارے ہاتھ سے لکھی
مناجاتیں پڑی ہیں
جس نے اس جانب کا منظر بھی
متلاشی نگاہوں سے اوجھل کر رکھا ہے
جو شاید جھانکنا چاہتی ہیں
کہ اس بھاری سلوں والی
دیوارکےاس پار
کہیں کوئی ہماری آہ و زاری پہ
گریہ کناں بھی ہے

ابھی کچھ دن ہی گُزرے ہیں
اسی دیوارکے پہلو میں بنے
معبد کے زینوں پر
ایک مجمع جمع ہوکر
اپنے دکھوں کی
دُہائی دے رہا تھا
مگر معبد کا ربّی اس جسارت پر
ذرا بھی خوش نہیں تھا
اور پھر مجمع کو زینے کی
راہ دینے والی سیاہ پوش لڑکی پر
دیوار گریہ کی ایک سِل
سِرک کر آگری
جس کے نیچے دب کےوہ کچلی گئی
کسی نے لاش کو کندھا دیا
اور بہت سے آہ وزاری کررہے تھے
اور کئی دیوار میں ،
سِل کے سرکنے سے
درآنے والے خلاء کو
تحریری مناجاتوں سے پُر کرنے لگے تھے

___________________________

‘The Wailing Wall’

Yeh kesi deewar-e-girya hai
Hamari Aah O zari
Jis ke kano par
Muddaton se pad rahi hai
Magar is mey
Koi larzish nahi hoti
Aur iski daradhon mey
Hamarey hath se likhi
Manajatain padi hain
Jin ne os janib ka manzar
Mutalashi nigahon se
Awjhal kar rakha hai
Jo shayad jhankna chahti hain
Ke is bhaari silon walo
Deewar k os paar
Kahi koi Hamari aah O zari par
Girya kinaa bhi hai
Abhi kuch din hi guzrey hain
Isi deewar ke pehlu mey baney
Ma’abad ke zino par
Ek Majmaa jama ho kar
Apney dukho ki
Duhaai de rahey tha
Magar ma’abad ka Rabbi
Is jasarat par
Zara bhi khush nahi tha
Aur phir majmay ko ziney
Raah deney wali siyah posh ladki par
Deewar-e-Girya ki eik sil
Sirak kar agiri
Jis ke nichey dab ke wo kuchli gayee
Kisi ne lash ko kandha dya
Aur boht se Aah O zaari kar rahey thai
Aur kai deewar mey
Ek sil ke girney se
Darr aney waley khalaa ko
Tehriri Manajato se
Purr karney lagey thai

__________________________

علی ارقم کو انکے ٹویٹر اکاونٹ پر فالو کریں

@aliarqam